طلاق کے بعد بیوی سے ہدیہ واپس لینا

میرے بیٹے کی شادی اپنے رشتہ داروں میں  ہوئی، لیکن بعض گھریلو مسائل کی وجہ سے ناچاقی پیدا ہوگئی۔ میرے بیٹے نے بالآخر اپنی بیوی کوطلاق دے دی اور والدین نے جہیز میں جوسامان دیا تھا،اسے واپس کردیا ۔صرف لڑکی کی ساس نے جوزیورلڑکے کی طرف سے دیا گیا تھا وہ رکھوالیا ۔ ساس کا یہ کہناتھا کہ ’’سال ڈیڑھ سال میں جوکچھ اس نے خرچ کیا ہے وہ اس زیور سے کہیں زیادہ ہے ‘‘۔ قرآن پاک (سورۂ بقرۃ : ۲،۲۲۹) کا ترجمہ ہے : ’’طلاق دوبار ہے ، پھر یا تو سیدھی طرح عور ت کو روک لیا جائے ، یا بھلے طریقے سے رخصت کردیا جائے اوررخصت کرتے ہوئے ایسا کرنا تمہارے لیے جائز نہیں ہے کہ جوکچھ تم انہیں دے چکے ہو، اس میں سے کچھ واپس لے لو ‘‘۔ اس آیت کی تفسیر میں مولانا مودودی ؒ نے لکھا ہے : ’’ یعنی مہر اورزیور اور کپڑے وغیرہ ، جوشوہر اپنی بیوی کودے چکا ہو، ان میں سے کوئی چیز بھی واپس مانگنے کا اسےحق نہیں ہے ۔ یہ بات ویسے بھی اسلام کے اخلاقی اصولوں کی ضد ہے کہ کوئی شخص کسی ایسی چیز کو ، جسے وہ دوسرے شخص کوہبہ یا ہدیہ و تحفہ کے طور پر دے چکا ہو،واپس مانگے۔اس ذلیل حرکت کو حدیث میں اس کتے کے فعل سے تشبیہ دی گئی ہے ، جواپنی ہی قے کوخود چاٹ لے ، مگر خصوصیت کے ساتھ ایک شوہر کےلیے تویہ بہت ہی شرم ناک ہے کہ وہ طلاق دے کر رُخصت کرتے وقت اپنی بیوی سے وہ سب کچھ رکھوالینا چاہے جواس نے اسے کبھی خود دیا تھا ۔ اس کے برعکس اسلام نے یہ اخلاق سکھائے ہیں کہ آدمی جس عورت کوطلاق دے ، اُسے رُخصت کرتے وقت کچھ نہ کچھ دے کر رُخصت کرے ‘‘۔ (تفہیم القرآن، جلداوّل ، ص ۱۷۵) حدیث کے مطابق یہ بڑی سخت وعید ہے ۔ پوچھنا یہ ہے کہ حدیث میں جوبیان کیا گیا ہے اس کے مطابق لڑکی کو وہ زیورات جوساس نے رکھوالیے تھے واپس دے دینا چاہئیں یا نہیں ؟ میرا خیال ہے کہ زیورات کی قیمت سنار سے لگوالی جائے اوریہ رقم ایک مشت یا ۱۰ ہزار ماہانہ کے حساب سے لڑکی کو دے دی جائے ۔ آخرت کے عذاب سے بچنے کے لیے یہ رقم واپس کرنا کچھ مہنگا سودا نہیں ہے ۔ قرآن وسنت کی روشنی میں رہ نمائی فرمادیجئے۔
جواب
ازدواجی تعلق کوقرآن کریم نے ’میثاق غلیظ ‘ (النسا ء: ۲۱) یعنی ’مضبوط معاہدہ ‘ سے تعبیر کیا ہے ۔ دواجنبی مرد وعورت نکاح کے بندھن میں بندھتے ہیں توان کے درمیان غایت درجہ کی محبت پیدا ہوجاتی ہے ۔ اس تعلق کے نتیجے میں اگر چہ دونوں ایک دوسرے سے فائدہ اُٹھاتے اور لطف اندوز ہوتے ہیں اورایک دوسرے کی مدد اور تعاون سے زندگی گزارتے ہیں ، لیکن اسلام نے مالی معاملات کی تمام تر ذمہ داری مر د پر عائد کی ہے اورعور ت کواس سے مستثنیٰ رکھا ہے ۔ مرد عورت کومہرا ادا کرتا ہے، اسے رہائش فراہم کرنے کی ذمہ داری لیتا ہے ، اس کا نفقہ برداشت کرتا ہے ، اسے خوش رکھنےکے لیے تحفے تحائف دیتا ہے۔ وغیرہ۔ اگر کسی وجہ سے رشتۂ نکاح پائیدار نہ رہ سکے اورزوجین کے درمیان تنازع کے سر ابھارنے اور مسلسل جاری رہنے کی بناپر نوبت علٰیحدگی تک پہنچ جائے تو شریعت کا منشا یہ معلوم ہوتا ہے کہ شوہر ازدواجی زندگی کا لطف اُٹھاتے ہوئے بیوی کوجو کچھ دے چکا ہواسے واپس لینے کی خواہش نہ رکھے اور اس کی کوشش نہ کرے ۔ صرف ایک صورت اس سے مستثنیٰ رکھی گئی ہے۔ وہ یہ کہ شوہر کےعلٰیحدگی نہ چاہنے کے باوجود بیوی کسی منافرت کی بنا پر رشتہ منقطع کرنے پر مصر ہواور خلع چاہے تو شوہر اپنی دی ہوئی چیزیں ( مہر وغیرہ) واپس لے سکتا ہے ۔ سورۃ البقرۃ، آیت ۲۲۹، جس کا ابتدائی حصہ اوپر سوال میں بھی نقل کیا گیا ہے ، اس میں اس کی صراحت موجود ہے اوراستثنا کا بھی ذکر ہے کہ اس صورت میں ’ ’ یہ معاملہ ہوجانے میں کوئی مضائقہ نہیں کہ عورت اپنے شوہر کوکچھ معاوضہ دے کر علٰیحدگی حاصل کرلے ‘‘۔ آیت کا آخری حصہ بہت اہم اوررو نگٹے کھڑے کردینے والا ہے ۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے : تِلْكَ حُدُوْدُ اللہِ فَلَا تَعْتَدُوْھَا۝۰ۚ وَمَنْ يَّتَعَدَّ حُدُوْدَ اللہِ فَاُولٰۗىِٕكَ ھُمُ الظّٰلِمُوْنَ۝۲۲۹ (البقرۃ: ۲۲۹) ’’ یہ اللہ کی مقرر کردہ حدود ہیں ، ان سے تجاوز نہ کرو اورجولوگ حدود الٰہی سے تجاوز کریں وہی ظالم ہیں ‘‘۔ مردوں کوعورتوں کے ساتھ حسنِ سلوک کا معاملہ کرنے ، ان کے معاملے میں اپنا حق چھوڑ دینے ، بلکہ علٰیحدگی کے وقت بھی انہیں کچھ دے کر رُخصت کرنے کی ہدایات قرآن کریم میں دیگر مقامات پر بھی دی گئی ہیں ۔ مثلاً سورۃ البقرۃ ، آیت ۲۳۷ میں ایک مسئلہ یہ بتایا گیا ہے کہ ’’ اگر نکاح کے بعد رـخصتی سے قبل طلاق ہوجائے اور عورت کا مہر مقر ر کیا گیا ہوتو نصف مہر دینا ہوگا ، الّا یہ کہ عورت نرمی برتے اور مہر نہ لے ، یا مرد نرمی سے کام لے اورپورا مہر دے دے ‘‘ ۔ یہ مسئلہ بتادینےکے بعد آگے مردوں کومخاطب کرکے کہا گیا ہے : وَاَنْ تَعْفُوْٓا اَقْرَبُ لِلتَّقْوٰى۝۰ۭ وَلَا تَنْسَوُا الْفَضْلَ بَيْنَكُمْ۝۰ۭ اِنَّ اللہَ بِمَا تَعْمَلُوْنَ بَصِيْرٌ۝۲۳۷ (البقرۃ: ۲۳۷) ’’ اورتم نرمی سے کام لو تو یہ تقویٰ سے زیادہ مناسبت رکھتا ہے ۔ آپس کے معاملات میں فیاضی کو نہ بھولو ۔ اللہ تمہارے اعمال کودیکھ رہا ہے ‘‘۔ سورۂ نساء میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: وَلَا تَعْضُلُوْھُنَّ لِتَذْہَبُوْا بِبَعْضِ مَآ اٰتَيْتُمُوْھُنَّ (النساء: ۱۹) ’’ اوران کواس مقصد سے تنگ کرنے کی کوشش نہ کر و کہ جوکچھ تم نے ان کودیاتھا اس کو واپس لے سکو ‘‘۔ اگلی آیت میں توصریح الفاظ میں ممانعت کی گئی ہے : وَاِنْ اَرَدْتُّمُ اسْتِبْدَالَ زَوْجٍ مَّكَانَ زَوْجٍ۝۰ۙ وَّاٰتَيْتُمْ اِحْدٰىھُنَّ قِنْطَارًا فَلَا تَاْخُذُوْا مِنْہُ شَـيْـــًٔـا۝۰ۭ اَتَاْخُذُوْنَہٗ بُھْتَانًا وَّاِثْمًا مُّبِيْنًا۝۲۰ (النساء: ۲۰) ’’ اور اگر تم ایک بیوی کی جگہ دوسری بیوی لے آنے کاارادہ ہی کر لوتو خواہ تم نے اسے ڈھیر سا مال ہی کیوں نہ دیا ہو ،اس میں سے کچھ واپس نہ لینا ۔ کیاتم اسے بہتان لگا کر اورصریح ظلم کرکے واپس لوگے؟‘‘ ان آیات کی تفسیر میں عموماً مفسرین نے لکھا ہے کہ جس مال کوواپس نہ لینے کا حکم دیا گیا ہے اس سے مراد مہر کی رقم ہے۔ لیکن آیات میں جس طرح کا عمومی انداز اختیار کیا گیا ہے ، اس سے ان مفسرین کی بات زیادہ مناسب معلوم ہوتی ہے جوکہتے ہیں کہ اس میں مہر کے ساتھ شوہر کی جانب سے دی گئی دیگر چیزیں بھی شامل ہیں ۔ مثلاً زیور ، لباس،نقدی اوردیگر تحائف ۔ علامہ قرطبیؒ نے لکھا ہے : ’’ اس آیت میں شوہروں سے خطاب ہے ۔ انہیں منع کیا گیا ہے کہ وہ بیویوں کونقصان پہنچانے کے لیے ان سے کچھ طلب کریں ۔ یہاں خاص طور پر یہ بات کہی گئی ہے کہ انہوں نے بیویوں کو جوکچھ بھی دیا ہو اسے واپس نہ مانگیں ۔ اس لیے کہ لوگوں کا عُرف یہ ہے کہ تنازع اوربگاڑ کے وقت آدمی وہ سب مانگنے لگتا ہے جواس نے عورت کودیاتھا ، چاہےوہ مہر ہویا تحائف ۔ اسی لیے یہاں خاص طور سے عام انداز اختیار کیا گیا ہے ‘‘۔ (الجامع لاحکام القرآن ، مؤسسۃ الرسالۃ ، بیروت ، ۲۰۰۶ء: ۴؍۷۳) بعض اردو مفسرین نے بھی یہی بات لکھی ہے ۔ مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودیؒ کا اقتباس اوپر سوال میں موجود ہے ۔ مولانا امین احسن اصلاحیؒ نے لکھا ہے : ’’ ظاہر ہے کہ اس سے نان نفقہ اورمہر وغیرہ کی قسم کی چیزیں مراد نہیں ہوسکتیں ، اس لیے کہ یہ چیزیں تو عورت کا حق ہیں ۔ ان کو واپس لینے یا کرنے کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا ۔ اس وجہ سے اس سے لازماً وہ چیزیں مراد ہیں جو بطور تحفہ وغیرہ دی گئی ہوں ۔ ان چیزوں کے بارے میں فرمایا کہ طلاق ہوجانے کے بعد مرد کے لیے یہ زیبا نہیں ہے کہ وہ ان کا حساب کتاب کرنے بیٹھ جائے۔ اس ممانعت کی وجہ یہ ہے کہ اس قسم کی خسّت اس فتوّت اوربلند حوصلگی کے منافی ہے جوایک مرد میں ہونی چاہیے ۔ چنانچہ عورتوں کے معاملے میں قرآن نے مردوں کواس فتوّت کی طرف ایک سے زیادہ مقامات میں توجہ دلائی ہے ، خاص طور پر تعلقات کے منقطع ہوجانے کی صورت میں ‘‘۔ (تدبر قرآن فاؤنڈیشن لاہور، ۲۰۰۹ء، ۱/۵۳۵، تفسیر البقرۃ: ۲۲۹) مولانا شمس پیر زادہؒ نے لکھاہے : ’’طلاق کی صورت میں مرد کومہر نہ واپس طلب کرنا چاہیے اورنہ وہ تحفے تحائف جواس نے بیوی کودیے ہوں ، کیوں کہ دی ہوئی چیز کوواپس لینا ، جب کہ مرد خود عورت کوچھوڑ رہا ہو، اخلاقاً صحیح نہیں ہے اور مہر تو عورت کا حق ہی ہے ، اس لیے اس کوواپس لینے کا سوال پیدا ہی نہیں ہوتا ‘‘۔ (دعوۃ القرآن ، تفسیر البقرۃ: ۲۲۹) بعض فتاویٰ میں کہا گیا ہے : ’’ مسئلہ کا دار ومدار عُرف پر ہے ۔ عام طورپر ہماری طرف کا جو عُرف ہے وہ یہ ہے کہ خاوند کی طرف سے جوزیورات بیوی کودیے جاتے ہیں ، اس کا مالک شوہر ہی رہتا ہے، عورت اسے عاریۃ استعمال کرتی ہے۔ جہاں یہ عرف ہو، وہاں شوہر اپنے زیورات کوواپس لے سکتا ہے ‘‘۔ (فتاویٰ دارالعلوم دیوبند: ۸؍۳۶۷، مسائل جہیز) اگر واقعی کسی جگہ کا یہ عرف ہو تو اس کے مطابق طلاق کے بعد شوہر اپنے دیے ہوئے زیور کو واپس لے سکتا ہے ، لیکن اس معاملے میں شریعت کے مزاج اورقرآن کریم کی صریح ممانعت کودیکھتے ہوئے بیوی کودیے گئے زیور کو واپس نہ لینا پسندیدہ ہے۔ صورت مسئولہ میں لڑکی کوشوہر کی طرف سے دیے گئے جوزیور طلاق کے بعد اس کی سسرال والوں نے رکھوالیے ہیں ، انہیں لڑکی کوواپس کردینا چاہیے۔ اگراب کسی وجہ سے اس کی واپسی ممکن نہ ہو تو اس کی رقم ادا کردینی چاہیے۔ البتہ رقم کا اعتبار وقتِ خرید کا نہ ہوگا ، بلکہ اِس وقت بازار میں اس زیور کی جو قیمت ہووہ ادا کی جائےگی۔

Leave a Comment