مسافت یک طرفہ ہوگی یا دوطرفہ ؟

کیا یہ فاصلہ یک طرفہ سفر کے لیے ہے یا آمد ورفت کی دُہری مسافت بھی شمار ہوگی؟
جواب
اس حصے کا جواب اوپر ہی کی سطور میں موجود ہے۔ویسے جن فقہا نے مقدار سفر مقرر کرنے کی کوشش کی ہے ،ان کے پیشِ نظر یک طرفہ مسافت تھی۔ (ترجمان القرآن، جولائی ،اگست ۱۹۴۵ء)

Leave a Comment